Print
PDF
User Rating: / 0
PoorBest 

 

بسم       اللہ الرحمن الرحیم

شرعی طلاق نامہ

ضروری وضاحت

آج کل اشٹام نویس ہر اس شخص کو جو طلاق نامہ لکھوانا چاہتا ہے، ’’طلاق ِثلاثہ‘‘ لکھ دیتے ہیں، جو ایک گناہ ہونے کے ساتھ ساتھ ایک بہت بڑی پریشانی کا پٖیش خیمہ بھی ہوتی ہے ، کیونکہ طلاقِ ثلاثہ کے بعد  بغیر ’’حلالہ‘‘ کے دوبارہ نکاح کی کوئی صورت نہیں ۔

اس صورت حال کو پیش نظر رکھتے ہوئے جامعہ اشرفیہ لاہور کے مفتیان کرام کے مشورہ سے یہ فارم( بنام شرعی طلاق نامہ) تیار کیا گیا ہے تاکہ

(۱)

شوہر طلاق دینے کے بعد رجوع کرنے میں مطلق العنان نہ ہو۔

(۲)

صلح کی صورت میں زوجین کی رضامندی سے بغیر ’’حلالہ‘‘ کے دوبارہ نکاح کیا جا سکے۔

(۳)

اگر عورت سابقہ شوہر سے نکاح پر راضی نہ ہو تو عدت کے بعد کسی دوسرے شخص کے ساتھ ’’ عقد ثانی‘‘ کے لئے آزاد ہو۔

دستخط مفتیان کرام، جامعہ اشرفیہ لاہور، پاکستان

عبد الخالق عفی عنہ

غلام مصطفی غفر لہ

محمد زکریا

فقیر احمد علی

محمد معاذ عفی عنہ

شاہد عبید عفی عنہ

شیر محمدعلوی

حمید اللہ جان عفی عنہ

مہر دارالافتاء ، جامعہ اشرفیہ فیروزپور روڈ لاہور

شرعی طلاق نامہ یہ ہے:۔۔۔۔


شرعی طلاق نامہ

تاریخ َ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شناختی کارڈ نمبر: ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  ولد  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سکنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اپنی بیوی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  دختر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سکنہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کو بوجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بلا جبر و اکراہ بقائمی ہوش و حواس

’’ایک  طلاقِ بائن ‘‘ دیتا ہوں۔

دستخط طلاق دہندہ یا انگوٹھے کا نشان

1     گواہ شد


2      گواہ شد